آئیے! حلال حرام کی پہچان سیکھ لیجئے! (شیخ الوظائف کے ہفتہ وار درس سے اقتباس)

ہم نے اپنے دماغ میں جو علوم بھرے ہوئے ہیں وہ یہ ہیں کہ مرنے سے پہلے کی محنت ہی ہمارے لیے سب کچھ ہے اور ساری محنت دماغ کو استعمال کرنے کی ہے اورہم نے اسی کا نام علم رکھا ہواہے۔ مگر یہ علم نہیں ہے۔علم وہ ہے جو ہمیں اپنے رب کی پہچان دے۔جن چیزوں پرہم محنت کرتے ہیںوہ فن ضرور ہے، ہماراسبجیکٹ ضرور ہے،چاہے وہ اکنامکس کا سبجیکٹ ہے ،چاہے وہ ٹیکنالوجی کا سبجیکٹ ہے،چاہے وہ سائنس کا سبجیکٹ ہے،چاہے وہ میڈیکل کا سبجیکٹ ہے یہ سارے سبجیکٹ ہیں، فن ہیں اور فن سیکھنا کوئی گناہ نہیں۔ لیکن علم صرف وہ ہے جس سے اللہ اور اس کے رسولﷺ کی پہچان پیدا ہو، علم وہ ہے جو اُس کی آنکھوں سے اندھیرا ہٹا دے،علم وہ ہے جو اس کی آنکھوں کے سامنے اجالا لے آئے ، علم وہ ہے جو اس کو آخرت کی پہچان دے دے، علم وہ ہے جو موت کے بعد آنے والی ہمیشہ کی زندگی کااس کو سلیقہ دے دے، علم تو اُسے کہتے ہیں۔ ایک بندہ کےپاس ساری دنیا کا علم اور فن ہے لیکن اس کے پاس اپنے رب کی پہچان نہیں ہے ، اپنے رب کی معرفت نہیں ہے، اس کے پاس حلال و حرام کی پہچان نہیں، تووہ جانور ہے۔

جو جانورکسی دوسرے مالک کے کھیت میںگھس جائے اسے کوئی پتہ نہیں کہ یہ مالک کا کھیت ہے یاکسی اور کا کھیت ہے۔ اسکے پیشِ نظر صرف بھوک ہے، خواہش ہے، چاہت ہے۔ اسے جہاں سبز گھاس نظر آئے گی وہ اُسی کھیت میں جائے گاایسا کرنے والا جانور ہوتا ہے‘ انسان نہیں ہوتا۔ انسان وہ ہے جس کی نظر اپنے کھیت کی گھاس پر ہوتی ہے ،چاہے وہ گھاس سوکھی ہویاجلی ہوئی ہو ۔گھاس دراصل تعبیر ہے ہر اس چیزکی جس کا تعلق رزق سے ہے، خواہش سے ہے، زندگی کے کسی شعبے سے ہےجس کے دل میں احکام الٰہی ہوگاوہ انسان کہے گاکہ یہ میراکھیت ہے اگرچہ کسی اور کے کھیت کی گھاس ہری بھری ہے مگر وہ اپنے کھیت کی گھاس ہی استعمال کرے گا۔یہ سوچ تب آئےگی جب اس کے دل میں علم الٰہی آئےگا، یہ سوچ اس وقت آئےگی جب اس کے دماغ کے اندر سے تمام تفریقیں ختم ہوجائیں گی کہ میں نے جواب تک علم سیکھا ہے، وہ مکمل نہیںہے۔!ہم نے جو کچھ سیکھاہے وہ فن ہے،جوصرف روٹی کمانے کے لیے ہے، روزی کمانے کے لیے ہے،روزی چاہے حلال ہو یا حرام۔حلال و حرام میں فرق کرنے کیلئے کوئی اور فن ہے،اس کے لیے کوئی اور علم ہے۔ یہ علم ہمیں اللہ والوں سے ملے گا کہ یہ رزق حلال ہے یا حرام ہے۔ یہ پھرزندگی کا نظام کہیں اور سے چلتا ہے۔

اللہ والو! میری بات غورطلب ہے! جس طرح ہم نے دنیا کے فن کو سیکھنے کے لیئے وقت دیا تھابچپن سے لے کر بڑھاپے تک قلم اورپنسل اُٹھائی، پڑھا ،لکھا، سوچا اور علم کے نام پر فن حاصل کیا لیکن اس علم نے یہ نہ سکھایاکہ اللہ کون ہے؟رسول ﷺ کون ہیں؟ حلال کیا ہے؟ حرام کیا ہے؟اس علم نے یہ سب نہ سکھایا۔ معلوم ہوا ، علم تو مل گیا مگر انسانیت نہیں ملی ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.